حضرت خواجہ معین الدین چشتی اجمیری کے نظر

ميرے مرشد ہیں ہو بہ ہو خواجہ
جیسے بیٹھے ہوں رو بہ رو خواجہ۔۔

ہو گئی ختم آپ کے در پہ
شیخِ کامل کی جستجو خواجہ۔۔

ميرے ماں باپ ان پہ قرباں ہوں
چشتيوں کی ہیں آبرو خواجہ۔۔

میرے مے خانہِ طریقت میں
مے و جام و خم و سبو خواجہ۔۔

میرا دم بھی سما میں نکلے
اب یہی ہے اک آرزو خواجہ۔۔

لاج رکھیں گے نام کے صدقے
مجھ کو کر دیں گے سرخرو خواجہ۔۔

مجھ کو بھی تجھ سے خاص نسبت ہے
دل ہے اجمیر اور تُو خواجہ۔۔۔

Share